Photo of the day

Photo of the day

Advertisements

خودی اور نشر کی توحید

ؤمن کی خودی میں انقلاب آتا ہے تو وہ نہ صرف بے پناہ قوتِ عمل کا مالک بن جاتا ہے بلکہ اس قوتِ عمل کے اظہار کے لئے میدانِ کار بھی تلاش کرتا ہے اور اس کا میدانِ کار باطل کا استیصال اور حکم حق کا اجرا ہوتا ہے۔ جس کی ابتداء کلمہ توحید کی اشاعت اور خدا کی محبت کی دعوت سے ہوتی ہے۔ کیونکہ اپنے محبوب کی طرح وہ بھی چاہتا ہے کہ نوعِ انسانی منزلِ کمال کو پہنچے۔ اس کا مقصد حیات وہی ہوتا ہے جو اس کے محبوب کا مقصد ہے۔ لہٰذا جب تک اس کائنات میں خدا کا مقصد پورا نہیں ہوتا اس وقت تک اس کے عاشق کا مقصد بھی پورا نہیں ہوتا اور خدا کا مقصد نوعِ بشر کی تکمیل ہے جو خدا کے قول کن سے ہو رہی ہے۔ خدا کی محبت میں خدا کے مقصد کی محبت بھی شامل ہے لہٰذا مومن خدا کے قول کن کا ممد و معاون بنتا ہے اور خدا کے بندوں کو خدا کی محبت کی طرف بلاتا ہے اور اپنی دعوت کو مؤثر اور کامیاب کرنے کے لئے اپنے عمل کی قوتوں کو جو خدا کی محبت سے مزید قوت پاکر درجۂ کمال کو پہنچ چکی ہوتی ہیں‘ہر ممکن طریق سے کام میں لاتا ہے اور ایسا کرنا اس کی اپنی آرزوئے حسن کی تشفی کے لئے ضروری ہوتا ہے۔ چونکہ وہ خدا کی مرضی کے مطابق پہلے خود بدل جاتا ہے اس لئے وہ دنیا کو بھی بدل سکتا ہے اور بدلتا ہے پہلے وہ خدا کے جمال کا نقش اپنی جان میں پیدا کرتا ہے اور اس کے بعد اس نقش جمال کو دنیا میں عام کر دیتا ہے۔

خدا کے دو مختلف قسم کے عاشق
ایک خدا کا عاشق وہ ہے جو خدا کی محبت سے سرشار ہو کر ’اللہ ہو‘ کا ایک نعرہ لگاتا ہے لیکن پھر خاموش ہو کر دنیا سے کنارہ کش ہو جاتا ہے اور اپنی خاموش گوشہ نشین محبت کو اپنی نجات کے لئے کافی سمجھتا ہے۔ وہ عبادت اور ریاضت تو کرتا ہے لیکن خدا کی محبت سے قوت پاکر باطل سے ٹکر نہیں لیتا اور خدا کا حکم دنیا میں جاری نہیں کرتا۔ حیدر کرار (ص) کی طرح جو کی روٹی تو کھاتا ہے لیکن آپ کی طرح خیبر فتح کرنے کے لئے نہیں نکلتابلکہ ایک راہب کی طرح کسی خانقاہ کے گوشہ عزلت میں چھپ کر بیٹھ جاتا ہے اور بادشاہت سے گریز کرتا ہے۔ دوسرا عاشق خدا وہ ہے جس کے نعرۂ ’ہو‘ سے کائنات ہل جاتی ہے اور اس کی قیادت کی تمنا میں اس کے کوچہ کے گرد گھومنے لگتی ہے۔ وہ باطل سے ٹکراتا ہے تاکہ اسے ملیامیٹ کر کے دنیا میں خدا کا حکم جاری کرے۔ وہ باطل کی دنیا کو اپنا شکار سمجھتا ہے اور اسے فنا کے گھاٹ اتار دینا چاہتا ہے چونکہ وہ خدا کا وہ کام کرتا ہے جس کا انجام پانا بالقوہ کائنات کی فطرت میں ہے اور جو ہر حالت میں انجام پاکر رہے گا وہ کائنات کے ارتقا کی قوتوں کو جو کائنات کے اندر مخفی ہیں‘ اپنے ساتھ شریک کار بنا لیتا ہے؛ لہٰذا اس کی تدبیر خدا کی تقدیر سے ہم آہنگ ہو جاتی ہے اور جو کچھ وہ چاہتا ہے وہی ہو جاتا ہے۔ عصر جدید کی دنیا جس میں دہریت، مادیت اور کفر اور الحاد کا دور دورہ ہے ایسے عاشق کے لئے ایک زبردست چیلنج کا حکم رکھتی ہے۔ اسے چاہئے کہ اس چیلنج کو قبول کرے اور عصر جدید کو مشرف بتوحید کر کے دنیا کو خدا کی مرضی کے مطابق بدل دے۔ اقبال حلاج کی زبان سے جس نے ’اَنا الحق‘ کہا تھا ان حقائق کی تلقین کرتا ہے کیونکہ ’اَنا الحق‘ (میں خداہوں)کہنے کے معنی ٰیہ ہیں کہ انسان دنیا میں وہ کام کرے جو خدا کر رہا ہے اور اس طرح سے خدا کا معاون اور شریک کار بن جائے۔ لہٰذا ان حقائق کی تلقین حلاج ہی کر سکتا تھا۔ اس طریق سے اقبال نے حلاج کے قول ’اَناالحق‘ کو جسے لوگوں نے کفر قرار دیا تھا ایک نئے معنی پہنائے جو اسلام کے مطابق ہیں۔
نقش حق اوّل بجاں انداختن

باز او را در جہاں انداختن!
نقش جاں تا در جہاں گردد تمام

می شود دیدارِ حق دیدارِ عام!
اے خنک مردے کہ ازیک ہُوے او

نُہ فلک دارد طوافِ کوے او
وائے درویشے کہ ہُوے آفرید

باز لب بربست و دم در خود کشید
حکمِ حق را در جہاں جاری نکرد

نانے از جو خورد و کرّاری نکرد
خانقاہے جست و از خیبر رمید

راہبی درزید و سلطانی ندید!
نقشِ حق داری؟ جہاں نخچیرِ تست

ہم عناں تقدیر با تدبیر تست
عصر حاضر با تو می جوید ستیز
نقشِ حق بر لوحِ ایں کافر بریز!
مسلمانوں کا قومی نصب العین
کلمہ توحید کی نشر و اشاعت مسلمانوں کا فطری مقصد زندگی اور قومی نصب العین ہے۔ کائنات میں مسلمان قوم کے وجود کا دار و مدار کلمہ توحید کی نشر و اشاعت پر ہے۔ اگر وہ توحید کی نشرواشاعت نہ کرے گی تو کائنات اپنے کمال کی طرف ارتقا نہیں کرسکے گی لیکن چونکہ کائنات کا ارتقا ضرور جاری رہے گا اس کا مطلب یہ ہے کہ یا تو مسلمان قوم ضرورکلمہ توحید کی عالمگیر اشاعت کا کام کرے گی اور یا پھر رب کائنات اسے مٹاکر ایک اور قوم پیدا کرے گا جو اس کام کو انجام دے گی لیکن کلمہ توحید کی عالمگیر اشاعت اور قبولیت عالم انسانی کی تاریخ کا ایک ضروری باب ہے جو ہر حالت میں اس تاریخ کے اندر لکھا جائے گا۔ خواہ اس باب کا مرکزی کردار موجودہ مسلمان قوم ادا کرے یا اس کی جگہ لینے والی کوئی اور مسلمان قوم۔ کلمہ توحید کی عالمگیر اشاعت کائنات کے ارتقا کی ایک ضروری منزل ہے جس سے کائنات ہر حالت میں گزرے گی، خواہ اس منزل کی راہ نمائی ہم کریں یا ہمارے مٹنے کے بعد کوئی اور قوم جو ہم سے زیادہ خدا سے محبت کرتی ہو اور خدا کے دین کی نشرواشاعت کے لئے ہم سے زیادہ مستعد اور سرگرم عمل ہو۔ چنانچہ قرآن حکیم نے ایک طرف سے تو یہ ارشاد فرمایا ہے کہ مسلمان قوم دنیا کی تمام قوموں سے بہتر قوم ہے جو لوگوں کی راہ نمائی کے لئے پیدا کی گئی ہے؛ اس لئے کہ وہ سچے خدا پر ایمان رکھتے ہیں (وہ ایمان جو نیک و بد کی تمیز کا واحد معیار اور اس تمیز کو جامہ عمل پہنانے کا ایک ہی محرک ہے) اور اس بنا پر نیک کاموں کی تلقین کرتے ہیں اور برے کاموں سے منع کرتے ہیں ۔
کُنْتُمْ خَیْرَ اُمَّۃٍ اُخْرِجَتْ لِلنَّاسِ تَأْمُرُوْنَ بِالْمَعْرُوْفِ وَ تَنْھَوْنَ عَنِ الْمُنْکَرِ وَ تُؤْمِنُوْنَ بِاللّٰہِ (110:03)
اور دوسری طرف سے یہ ارشاد فرمایا ہے کہ اے مسلمانوں اگر تم خدا کے دین کو ترک کر دو گے تو خدا تمہاری جگہ ایک اور قوم لے آئے گا جو خدا سے محبت کریں گے اور جن سے خدا محبت کرے گا جو مومنوں کے ساتھ نرمی سے اور کافروں کے ساتھ سختی سے پیش آئیں گے وہ لوگوں کی ملامت سے بے پرواہ ہو کر خدا کے دین کو پھیلانے کے لئے جہاد کریں گے۔
ٰٓیاَیُّھَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا مَنْ یَّرْتَدَّ مِنْکُمْ عَنْ دِیْنِہٖ فَسَوْفَ یَاْتِی اللّٰہُ بِقَوْمٍ یُّحِبُّھُمْ وَ یُحِبُّوْنَہٗٓ اَذِلَّۃٍ عَلَی الْمُؤْمِنِیْنَ اَعِزَّۃٍ عَلَی الْکٰفِرِیْنَ یُجَاھِدُوْنَ فِیْ سَبِیْلِ اللّٰہِ وَ لَایَخَافُوْنَ لَوْمَۃَ لَآءِمٍ (54:05)
پھر اس وعید کے ساتھ قرآن حکیم کا یہ وعدہ بھی ہے کہ خدا نے اپنے رسول کو توحید کے صحیح اور سچے نظریہ حیات کے ساتھ بھیجا ہی اس لئے ہے کہ وہ تمام باطل نظریات پر غالب آئے اور اگر اس بات میں کوئی شخص شبہ کرے تو اسے یہ معلوم ہونا چاہیے کہ اس کی صداقت کی گواہی خود خدا دے رہا اور خدا کی گواہی ہر گواہی سے کفایت کرتی ہے کیونکہ اس سے زیادہ سچا اور کوئی نہیں۔
ھُوَ الَّذِیْ اَرْسَلَ رَسُوْلَہٗ بِالْھُدٰی وَ دِیْنِ الْحَقِّ لِیُظْھِرَہٗ عَلَی الدِّیْنِ کُلِّہٖ وَ کَفٰی بِاللّٰہ شَھِیْدٍا (28:48)
گویا مسلمان اگر توحید کی نشرواشاعت کے لئے کام کریں تو خود خدا کا وعدہ ہے کہ وہ اس مہم میں ناکام نہیں رہیں گے ۔یہی وجہ کہ اقبال بڑے زور سے کہتا ہے کہ اگر مسلمان درحقیقت مسلمان ہے تو جب تک پوری دنیا سے کلمہ توحید کی آواز بلند نہ ہولے اسے چین سے نہیں بیٹھنا چاہیے
؂ تا نہ خیزد بانگ حق از عالمے
گر مسلمانی نیا سائی دمے
ارتقا کی منزل مقصود
کائنات کے ارتقا کا رخ عقیدہ توحید کی عالمگیر قبولیت کی طرف ہے جو ہوکر رہے گی۔ مسلمان اس ارتقا کا ذریعہ بننے والا ہے اور وہ اس بات سے پوری طرح آگاہ بھی ہے۔ گویا توحید کے نغمے کائنات کے اندر سوئے ہوئے پڑے ہیں۔ کائنات ایک ساز ہے جو کسی زخمہ ور کا منتظر ہے اور وہ زخمہ ور مسلمان ہے۔ مسلمان اپنے ایمان کی وجہ سے کائنات کے خفیہ نغموں کو یعنی ارتقائے کائنات کی ممکنات کو خوب جانتا ہے اور قرآن کے علم کی وجہ سے ان کا علم اس کے خون میں رواں ہے۔ اسے چاہیے کہ کائنات کے ساز کے تاروں کی اپنی مضراب سے چھیڑدے پھر دیکھے کہ اس سے کتنے حسین نغمے بلند ہوتے ہیں۔ یہ ساز اسی کے لیے بنایا گیا ہے اگر وہ اسے کام میں نہ لائے تو بیکار ہے یعنی وہ اقوام عالم کا رہنما بنایا گیا ہے اس کے بغیر انسانیت اپنی منزل مقصود کو نہیں پاسکتی مسلمان قوم کی زندگی کا دار ومدار اس بات پر ہے کہ وہ خدا (اللہ اکبر یا تکبیر) پر ایمان رکھتی ہے اس ایمان کے تقاضوں میں ایک بنیادی تقاضا عقیدہ توحید کی حفاظت اور اشاعت بھی ہے۔ لہٰذا یہ تقاضا اس کی زندگی کا فطری مقصود ہے جسے وہ ترک کرے تو زندہ نہیں رہ سکتی۔ مسلمان قوم چہرہ ہستی کی رونق اور قرآن کی آیت کریمہ لِتَکُوْنُوْا شُہَدَآءَ عَلَی النَّاسِ کے مطابق اقوام عالم کی راہنما ہے۔
نغمہ ہایش خفتہ در ساز وجود

جویدت اے زخمہ ور ساز وجود
صد نوا داری چو خون در تن رواں

خیزد مضرابے بتارِ او رساں
زانکہ در تکبیر راز بود تست

حفظ و نشر لا الٰہ مقصود تست
تا نہ خیزد بانگ حق از عالمے

گر مسلمانی نیا سائی دمے
آب و تاب چہرہ ایام تو

درجہان شاہد علی الاقوام تو
مسلمان ساز کائنات کا مضراب ہے
قرآن حکیم میں ہے
وَکَذٰلِکَ جَعَلْنَاکُمْ اُمَّۃً وَّسَطًا لِتَکُوْنُوْا شُہَدَآءَ عَلَی النَّاسِ وَ تَکُوْنَ الرَّسُوْلُ عَلَیْکُمْ شَہِیْدًا
’’اور اسی طرح سے ہم نے تم کو تاریخ عالم کے وسط میں آنے والی امت بنایا ہے تاکہ تم لوگوں کے سامنے خدا کی ہدایت کے پہنچنے کی گواہی دو اور رسول تمہارے سامنے خدا کی ہدایت کے آنے کی گواہی دے‘‘
مراد یہ ہے کہ جس طرح سے رسول پر یہ فرض عائد کیا گیا تھا کہ وہ خدا کی ہدایت تم تک پہنچائے اسی طرح تم پر یہ فرض عائد کیا گیا ہے کہ تم خدا کی ہدایت لوگوں تک پہنچاؤ اور تمہیں ایک ایسی امت بنایا گیا ہے جو نوع انسانی کی تاریخ کے وسط میں آئی ہے تاکہ تم اس فرض کو بطریق احسن ادا کرسکو۔ کیونکہ ایک طرف سے تو تم پہلے انبیاء کی امتوں میں سے جو قدیم زمانہ کی امتیں ہیں سب سے آخر پر ہو جس کی وجہ سے جو تعلیم تمھیں دی گئی ہے وہ مکمل ہے اور تا قیامت نوعِ انسانی کی راہ نمائی کے سرچشمہ کے طور پر قائم رہنے کی صلاحیت رکھتی ہے اور دوسری طرف سے تم اپنی اسی مکمل تعلیم کی وجہ سے آئندہ زمانہ کی نسل انسانی کے راہ نما ہو جو تمہاری راہ نمائی کو قبول کرکے اپنے حسن و کمال کی انتہا کو پہنچے گی۔ گویا تم عہد قدیم اور عصرجدید کے درمیان ایک واسطہ یا اتصال کی کڑی ہو۔ کائنات رنگ و بو کوئی راز نہیں یہ اس لیے وجود میں آئی ہے کہ نوع انسانی جو حاصل کائنات ہے‘ اپنے حسن کی حالت کمال کو پہنچے حسن نوع انسانی کی فطرت میں مضمر ہے اور بالقوہ اس کے اندر موجود ہے اور نوع انسانی کے اپنے ہی ایک ترقی یافتہ عنصر کی راہ نمائی سے جسے مسلمان قوم کہاجاتا ہے بالفعل اور آشکار ہوگا۔ یہ کائنات گویا ایک ساز ہے جو اس بات کا منتظر ہے کہ اس کا ماہر زخمہ ور آئے اور اپنے مضراب سے اس کے تاروں کو چھیڑے اور ان دلکش اور دلنواز نغموں کو بلند کرے جو اس کے اندر پوشیدہ ہیں اور وہ ماہر زخمہ ور مسلمان ہے۔
؂ جہان رنگ و بو پیدا تو مے گوئی کہ راز است ایں
یکے خود را بتارش زن کہ تو مضراب و ساز است ایں
عقیدہ توحید کی دلکشی اور فطرت انسانی کے ساتھ اور تمام علمی اور سائنسی حقائق کے ساتھ اس کی مطابقت اور ہم آہنگی مسلمان کے پاس ایک زبردست قوت تسخیر ہے جس سے وہ پوری دنیا کو بے تیغ و تفنگ اور پرامن طریق سے فتح کرسکتا ہے۔
؂ ہفت کشور جس سے ہو تسخیر بے تیغ و تفنگ
تو اگر سمجھے تو تیرے پاس وہ سامان بھی ہے
عقیدہ توحید کی دل کشی کا دار و مدار
لیکن عقیدہ توحید کی ساری دلکشی کا دار و مدار اس حقیقت پر ہے کہ خدا نہ صرف انسان کی آرزوئے حسن کا واحد مقصود اور مطلوب ہے بلکہ خدا کی صفات کا حسن مظاہر قدرت میں آشکار ہے اور ہم مظاہر قدرت میں اس حسن کا مشاہدہ کرکے خدا کو جان سکتے ہیں اور خدا کے ساتھ اپنی محبت کو فروغ دے سکتے ہیں۔ لہٰذا اگر ہم مظاہر قدرت کے مشاہدہ سے حاصل ہونے والے علم سے (جسے آج کل سائنسی حقائق کا نام دیا جاتا ہے) خدا کے عقیدہ کو الگ کرلیں تو خدا کے عقیدہ کی جاذبیت اور دل کشی باقی نہیں رہتی اور وہ تسخیر قلوب کے ذریعہ کے طور پر پوری طرح سے مؤثر نہیں رہتا اور اس کی نشرو اشاعت جلد کامیاب نہیں ہوتی۔ یہی سبب ہے کہ قرآن حکیم نے خدا کے عقیدہ کو مظاہر قدرت کے مشاہدہ اور مطالعہ کے ذریعہ سے سمجھنے پر زور دیا ہے اور یہی وجہ ہے کہ عقیدہ توحید کی نشر واشاعت کے ضمن میں اقبال ہمیں بتاتا ہے کہ اگر عقیدہ توحید (عشق) کو سائنس (زیرکی) کے ساتھ جوڑ دیا جائے تو پھراس کی کشش دنیا کے اندر ایک انقلاب پیدا کردیتی ہے اور ہمیں مشورہ دیتا ہے کہ اُٹھیں اور عقیدہ توحید اور سائنس کو آپس میں ملاکر اسلام کے حق میں ایک عالمگیر ذہنی انقلاب پیدا کریں۔ ؂
عشق چوں با زیرکی ہمبر شود

نقشبند عالم دیگر شود
خیز و نقش عالم دیگر بنہ

عشق را با زیرکی آمیز دہ
مستقبل کا طریق کار
اقبال کے اس مشورہ کو جامہ عمل پہنانے کے لیے ہمیں چاہیے کہ ہم اپنی یونی ورسٹیوں کے لیے سائنسی علوم کی نصابی کتابوں کو دوبارہ اس طرح سے لکھیں کہ خدا کا عقیدہ ان علوم کا مدار و محور بن جائے۔ اگر آج ہم اپنے فطری مقصد حیات کو جس پر ہماری زندگی کا دارومدار ہے یعنی کلمہ توحید کی نشر و اشاعت کو اپنا قومی نصب العین بنالیں تو ہم نہ صرف اندرونی طور پر پوری طرح سے متحد اور منظم ہوسکتے ہیں بلکہ کلمہ توحید کی موثر نشرواشاعت کی غرض سے عقیدہ توحید کو سائنس کے ساتھ ملا کر ہم تسخیر قلوب اور فتح بلاد کی ایک ایسی قوت پیدا کرسکتے ہیں جس کے سامنے ایٹمی ہتھیاروں کی قوت بھی بیکار نظر آئے گی اس کی وجہ یہ ہے کہ اس صورت میں طبیعیات‘ حیاتیات اور نفسیات کے تمام حقائق عقیدہ توحید کی علمی اور عقلی تائید کے لئے مہیا ہوجاتے ہیں جس سے عقیدہ توحید ایک یقین پر مجبور کرنے والی حقیقت بن جاتا ہے۔ ایک قوم کسی مقصد حیات کے ماتحت ہی متحد ہوسکتی ہے جس قوم کا کوئی مقصد نہ ہو یا جس قوم کا مقصد حیات ایسا ہو کہ اس کی سمجھ میں نہ آسکتا ہو اور اس میں محبت کی گرمی اور عمل کا جوش پیدا نہ کرسکتا ہو تو وہ قوم متحد نہیں ہوسکتی۔ توحید کی نشرواشاعت ایک ایسا مقصد ہے جو ہمارے لہو کو گرما سکتا ہے۔ جب تک ہم اس سے غافل رہیں گے ہم دنیا میں اپنا رول ادا نہیں کرسکیں گے اور دنیا میں اول درجہ کی قوم شمار نہیں ہوسکیں گے۔ اقبال نے اس بات پر بڑا زور دیا ہے کہ مسلمان توحید کی نشرو اشاعت کو اپنا قومی نصب العین بنائیں تاکہ وہ ان کے اتحاد اور ان کی زندگی دونوں کا ضامن ہو۔
چوں زربط مدعائے بستہ شد

زندگانی مطلع برجستہ شد
مدعا راز بقائے زندگی

جمع سیماب بقائے زندگی
یہ دور اپنے براہیم کا منتظر ہے
لیکن عقیدہ توحید کی نشرواشاعت ہمیشہ تحریر و تقریر کے پرامن طریق سے جاری نہیں رہتی بلکہ اس کے دوران میں زود یا بدیر ایسے مواقع پیش آتے ہیں جب باطل کی تشدد پسند قوتیں مومن کے راستہ میں رکاوٹیں پیدا کرتی ہیں۔ ایسی حالت میں مومن کے لئے ضری ہوتا ہے کہ ان تشدد کی رکاوٹوں کو تشدد ہی سے دور کرے اور وہ اس ہمت آزما صورت حال کے لیے پہلے سے تیار ہوتا ہے۔ لہٰذا جب یہ صور ت حال پیش آتی ہے تو وہ اپنی پوری قوت سے باطل کی رکاوٹوں کا مقابلہ کرکے ان کو نیست و نابود کردیتا ہے۔ لااِلٰہ اِلا اللہ ایک علمی نظریہ ہی نہیں بلکہ باطل کے لیے دعوت مبارزت بھی ہے اس کا مطلب صرف یہ نہیں کہ میں گواہی دیتا ہوں کہ خدا یک ہے بلکہ یہ بھی ہے کہ میں خدا سے اس بات کا عہد کرتا ہوں کہ جہاں تک میرے بس میں ہے میں معبودانِ باطل کو جو اس دنیا میں عالم انسانی کی بہترین ترقی اور خوشحالی اور اگلی دنیا میں ان کی بہترین راحت اور مسرت پیدا کرنے والے میرے اور میرے محبوب کے مشترک مقصد حیات کے راستہ میں حائل ہیں‘ ملیامیٹ کرکے رہوں گا اور دنیا سے ایک ہی سچے خدا کو منوا کے رہوں گا۔ تاکہ بحیثیت ایک مسلمان کے خدا اور انسان کی طرف سے جو فرائض مجھ پر عائد ہوتے ہیں ان سے سبک دوش ہوجاؤں۔
؂ تا نہ خیزد بانگ حق از عالمے
گر مسلمانی نیا سائی دمے
اس لیے لا اِلٰہ کہنا کوئی آسان سا کام نہیں بلکہ یہ کہنے کے بعد جان جوکھوں میں ڈالنا پڑتا ہے۔ یہ ایک ایسا عہد ہے جسے نبھانے کی مشکلات ایک انسان کو لرزہ براندام کردیتی ہیں۔ یہ خدا کو جان دینے کا عہد ہے۔
؂ چوں می گویم مسلمانم بلرزم
کہ دانم مشکلات لا اِلٰہ را
مومن کے عقیدہ توحید کے اندر یہ اقرار پوشیدہ ہے کہ جہاں تک اس کا بس چلے گا وہ معبودانِ باطل کو ملیامیٹ کرکے ایک ہی معبودِ برحق کی عبادت اور اطاعت کو دنیا میں باقی رکھے گا اور مومن کی بے پناہ قوت عمل جو خودی کے نقط�ۂ کمال پر اسے حاصل ہوتی ہے اس اقرار پر عمل کا کام اس کے لیے آسان کرتی ہے۔ لااِلٰہ الا اللہ کہنے کا مطلب یہ ہے کہ مومن اس دنیا کو ایک بتکدہ سمجھے اور اپنے آپ کو ابراہیم خلیل اللہ کی طرح کا بت شکن اور اس بات کے لیے تیار رہے کہ وہ خلیل اللہ ہی کی طرح کسی وقت آگ میں ڈالا جائے گا۔
؂ صنم کدہ جہاں اور مرد حق ہے خلیل
یہ نکتہ وہ ہے کہ پوشیدہ لا اِلٰہ میں ہے
افسوس ہے کہ ابھی تک بت پرستی کے اس دور کا ابراہیم پیدا نہیں ہوا جو اس دنیا کو ایک صنم کدہ سمجھے اور اس کے بتوں کو توڑ کر فنا کردے۔
؂ یہ دور اپنے ابراہیم کی تلاش میں ہے
صنم کدہ ہے جہاں لا اِلٰہ اِلا اللہ
بے شک توحید کا مطلب خدا کو ایک ماننا ہے لیکن خدا کو ایک ماننے میں خدا کو ایک منوانا بھی شامل ہے خدا کو ایک ماننے سے خودی اپنی محبت اور قوت کے کمال پر پہنچتی ہے۔ جب ایسا ہوتا ہے تو پھر اس کی محبت اور قوت کا مصرف سوائے اس کے اور کچھ نہیں ہوتا کہ وہ اس طلسم رنگ و بو کو جسے کائنات کہتے ہیں اور جو خدا دشمنی اور بت پرستی کے ساتھ ہم معنی ہوگیا ہے توڑ کر خدا کو ایک منوائے۔ توحید کا مطلب یہی تھا لیکن افسوس کہ ہم مسلمانوں نے اسے اس طرح سے نہیں سمجھا ۔
؂ خودی سے اس طلسم رنگ و بو کو توڑ سکتے ہیں
یہی توحید تھی جس کو نہ تو سمجھا نہ میں سمجھا

Sirf Khaliq Kieynaat

Sirf Khaliq Kieynaat

Sirf khalaq
 

 

 
 

— 

All U.K Member’s down load Free software » My – MFB – Uniting Over… mymfb.com

All U.K Member’s down load Free software » My – MFB – Uniting Over… mymfb.com

All U.K Member’s down load Free software » My – MFB – Uniting Over…
mymfb.com
Millatfacebook MFB is a Facebook Rival and A Place to meet Over 1.6 Billion Muslims and Peaceful people from other religions. People use Millatfacebook to keep up with friends, upload an unlimited number of photos, post links http://mymfb.com/blog/44697/all-u-k-member-039-s-down-load-free-software/

خر یہ سب عذاب ہم پر کیوں آتے ہیں؟ کبھی ہم نے غور کیا کہ یہ سب کیوں ہو رہا ہے ہمارے ساتھ؟ کبھی زلزلے، کبھی سیلاب، کبھی ایک دوسرے کی گردنیں کاٹنے کا عذاب؟ آئیں تھوڑا پس منظر میں جاتے ہیں جہاں ہمارے آباء و اجداد الله سے وعدہ کر رہے تھے کہ اے الله ہمیں ہندو اور انگریز کی دھری غلامی سے نجات دے، ہمیں ایک آزاد ملک دے جہاں ہم تیرے دین کا بول بالا کریں گے۔ تیرے نبی کا دیا نظام قائم کریں ۔ ہم اسلام کے نظام کو قائم کر کے یہاں سے امّت مسلمہ کا احیا کریں گے۔۔ ہم نے نعرے لگائے کہ پاکستان کا مطلب کیا ” لا الہ الا اللہ ” الله نے اپنا وعدہ پورا کر دیا اور ہمیں زمین کی حکمرانی دی ۔۔ “قریب ہے وہ وقت کہ تمہارا رب تمہارے دشمن کو ہلاک کر دے اور تم کو زمین میں خلیفہ بنائے، پھر دیکھے کہ تم کیسے عمل کرتے ہو”سورة الأعراف(129) پھر اس کے بعد ہم اپنے وعدے سے مکر گئے۔ الله نے کہا کہ وَهُوَ الَّذِي فِي السَّمَاءِ إِلَٰهٌ وَفِي الْأَرْضِ إِلَٰهٌ اور وہی (ایک) آسمانوں میں معبود ہے اور (وہی) زمین میں معبود ہے۔ سورة الزخرف 84 مگر ہم نے کہا نہی الله آسمانوں کا إله تو ہو گا زمین کا نہی. زمین کے حکمران ہم خود ہیں “sovereignty belongs to peoples” یہاں اس کا بنایا قانون مانا جائے گا جو عوام سے ووٹ لے کر حکمران بنتا ہے، حاکمیت صرف اسی کی ہو گی، وہ چاہے خلاف قران قانون بنائے ہم سر تسلیمِ خم کرتے ہیں۔۔ پھر حکمرانوں نے امریکہ کو اپنا إله بنا لیا اور ہم دیکھتے رہے ۔ اسلام کے نام پر بننے والے اس ملک میں ہم نے انفرادی اور اجتماہی سطح پر وہ وہ جرائم کیے، وہ وہ ظلم کیے جس کی نظیر نہی ملتی۔ ہم نے ہر وہ کام کیا جو اسلام کے خلاف تھا ۔ ہم نے اسلام کا نام لینے والوں پر مساجد میں بمباری کی، ان پر فاسفورس بم پھینکے۔ ہم نے اپنے ملک کے اندر سیاست کے لیے قتل و غارت اور ظلم و ستم کا بازار گرم کیا۔۔ پاکستان بننے سے پہلے ہم الله سے وعدے کرتے تھے کہ “ایک ہوں گے مسلم حرم کی پاسبانی کے لیے”، اور پاکستان بننے کے بعد ہم نے نیشنلزم کو پروان چڑھایا۔ ہم نے کہا کہ عراقی و افغانی مسلمان سے ہمارا تو کوئی تعلق نہی ہم نے “سب سے پہلے پاکستان” کے نعرے لگائے۔ اور اس تازہ صلیبی جنگ “وار اگینسٹ اسلام” میں صلیبیوں کے “فرنٹ لائن اتحادی” بنے۔ اسلام نے نام پر قائم ہونے والی اس “پاک سر زمین” سے ستاون ہزار بار امریکی طیارے اڑ اڑ کر ہمارے پڑوس میں غریب اور مظلوم مسلمان بچوں کے چیتھڑے اڑاتے رہے اور ہم ڈالر لے کر ناچ گانوں اور فحاشی و عریانی پھیلانے میں مصروف ہو گئے۔۔ آج بھی صلیبی افواج(نیٹو) کا سامان رسد ہماری سرزمین سے، ہماری نگرانی میں جاتا ہے۔ اس سب کے باوجود ہم خود کو اسلام کا ٹھیکیدار سمجھتے ہیں ۔ ہم نے ڈالروں کی خاطر اپنی بیٹیوں کو فروخت کیا ۔۔ اپنے بچوں، خواتین اور بزرگوں کو ڈرون حملوں میں شہید کروایا۔ ہمارے جرائم کی فہرست بہت طویل ہے۔۔۔ ہم نے تو پڑوس کے اسلامی ملک کے سفیر تک تو نہی چھوڑا اسے بھی تمام سفارتی آداب کو بالا طاق رکھتے ہوئے امریکہ کو فروخت کر دیا۔ ھم نے ہر ہر موقع پر الله سے وعدہ خلافی کی، اس کا قوانین کا مذاق اڑایا جس کا نتیجہ یہ ہوا کہ ہم پر ایک عذاب نازل ہو رہا ہے۔ وَلَنُذِيْـقَنَّهُمْ مِّنَ الْعَذَابِ الْاَدْنٰى دُوْنَ الْعَذَابِ الْاَكْبَرِ لَعَلَّهُمْ يَرْجِعُوْنَ اور ہم چکھاتے رہیں گے ان کو چھوٹے چھوٹے عذاب اس بڑے عذاب سے پہلے تاکہ یہ لوگ باز آجائیں (اپنی سرکشی سے) سورة السجدة 21 یہ چھوٹے عذاب ہیں ہمیں جنجھوڑنے کے لیے ، کبھی زلزلہ آ گیا، کبھی سیلاب آ گیا ، کبھی طیارے گرے، کبھی تودے گرے، کبھی ملک دو لخت ہوا، کبھی ہم بوری بند لاش بنے۔ ہم نے اس ” الْعَذَابِ الْاَدْنٰى” سے بھی کوئی سبق نہی سیکھا، اب “الْعَذَابِ الْاَكْبَرِ” سروں پر کھڑا ہے ۔ قوموں پر بڑا عذاب دنیا میں یہ ہوتا ہے کہ اس قوم کو جڑ سے اکھاڑ دیا جاتا ہے ۔ یعنی”تمہاری داستان تک بھی نہ ہو گی داستانوں میں”۔ کسی نے یہ بقراط سے جاکے پوچھا مرض تیرے نزدیک مہلک ہیں کیا کیا کہا دکھ جہاں میں نہیں کوئی ایسا کہ جس کی دوا حق نے کی ہو نہ پیدا مگر وہ مرض جس کو آسان سمجھیں کہے جو طبیب اس کو ہذیان سمجھیں دوا اور پر ہیز سے جی چرائیں یو نہی رفتہ رفتہ مرض کو بڑھائیں یہی حال دنیا میں اس قوم کا ہے بھنور میں جہاز آکے جس کا گھرا ہے کنارہ ہے دور اور طوفان بپا ہے گماں ہے یہ ہر دم کہ اب ڈوبتا ہے نہیں لیتے کروٹ مگر اہلِ کشتی پڑے سوتے ہیں بے خبر اہلِ کشتی لیکن ہم ابھی تک سو رہے ہیں اور انتظار میں ہیں کہ الله کا حکم آ جائے کہ ہمیں تبدیل کر کے یہاں کسی اور قوم کو آباد کر دیا جائے۔ کچھ لوگ کہتے ہیں کہ پاکستان اسلام کے نام پر وجود میں آیا لہذا اس کو کوئی ختم نہیں کر سکتا۔ اگر یہ سچ ہے کہ اللہ نے اس زمین کو کسی خاص مقصد کیلئے وجود بخشا ہے تو اللہ اتنی اہم زمین پر ہم جیسے بزدلوں، خودغرضوں، خواہشات کے غلاموں اور الله کے نافرمانوں کا وجود کبھی برداشت نہیں کریگا۔ پاکستان ضرور باقی رہے گا بلکہ اس کی حدود کشمیر سے لیکر کینیا تک پھیل جائیں گی لیکن یہاں موجود وہ لوگ جو عظیم مقصد کو پورا کرنے کے بجائے اس کی راہ میں رکاوٹ ہیں ان کو مٹادیا جائے گا اور اس ملک کو ایسے ہاتھوں میں دے دیا جائے گا جنہیں دیکھ کر 1947ء کے شہداء کی روحیں خوش ہو اٹھیں گی۔

Muhabat Unsay Rakho

Muhabat Unsay Rakho

Image hosting & design by Zahid courtesy TinyPic

Click on Gravater Link to be redirected to website and blogs or any sites that help describe about any other group’s.
http://gravatar.com/wazirabad7

Click on Gravater Link to be redirected to website and blogs or any sites that help describe about any other group’s.

Islamic Hijri Calendar For May – 2017

Islamic Hijri Calendar For May – 2017

:Aslam Alieykum2eng:
1642.gif
اسلامی مہینوں کے اعتبار سے آٹھواں مہینہ شعبان المعظم کہلاتاہے یہ مہینہ عبادت ومغفرت کاہوتاہے اسی مہینہ میں گناہگاراپنے دامن کورحمت خداوندی سے بھرسکتے ہیں –

شعبان تشعب سے ہے جس کے معنیٰ تقریب یعنی پھسلانااورشاخ درشاخ ہوناہے حضرت انس ؓ فرماتے ہیں کہ اس مہینہ کانام شعبان اس لیے رکھاگیاہے کہ اس میں روزہ رکھنے والے کوشاخ درشاخ بڑھنے والی خیروبرکت میسر ہوتی ہے حتٰی کہ وہ جنت میں داخل ہوجاتاہے ۔

بعض کاکہناہے کہ شعبان شعب سے ہے یعنی وہ راستہ جوپہاڑ کوجاتاہواسے شعب کہتے ہیں ظاہر بات ہے کہ ایساراستہ ہمیں بلندی پہ لے جاتاہے اورشعبان بھی وہ پاکیزہ مہینہ ہے جوہمیں روحانیت کی بلندیوں تک پہنچادیتاہے ۔شعبان کالغوی معنیٰ جمع کرنااورمتفرق کرنادونوں آتاہے
فضائل شعبان بزبانِ آقاخیرالانام

حضوراکرم ﷺ نے فرمایاکہ رجب میرامہینہ ہے شعبان خداکامہینہ ہے اوررمضان میری امت کامہینہ ہے
حضرت انس بن مالک ؓ سے مروی ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے ارشاد فرمایا:شعبان کی فضیلت تمام مہینوں پرایسی ہے جیسے تمام انبیاء کرام پہ میری فضیلت ہے اوردوسرے مہینوں پہ رمضان کی فضیلت ایسی ہے جیسے تمام کائنات پراﷲ تعالیٰ کی فضیلت ۔ایک اورروایت میں ملتاہے کہ آپ ﷺ نے ارشاد فرمایاکہ رجب اوررمضان کے درمیان شعبان ایک ایسامہینہ ہے جس کے فضائل کالوگوں کوعلم نہیں فرمایااس مہینے لوگوں کے اعمال اﷲ تک پہنچائے جاتے ہیں ۔

آبپاشی کامہینہ
حضرت صفوریؒ فرماتے ہیں کہ رجب المرجب بیج بونے کا،شعبان المعظم آبپاشی کا،اوررمضان المبارک فصل کاٹنے کامہینہ ہے لہٰذاجورجب المرجب میں عبادت کابیج نہیں بوتااورشعبان المعظم میں آنسوؤں سے سیراب نہیں کرتاوہ رمضان المبارک میں فصلِ رحمت کیوں کرکاٹ سکے گا؟مزید فرماتے ہیں رجب المرجب جسم کو،شعبان المعظم دل کواوررمضان المبارک روح کوپاک کرتاہے (نزہۃ المجالس)
شعبان المعظم میں پیش آنے والے اہم واقعات
اس مبارک مہینہ کی 5 تاریخ کونواسہ رسول ﷺحضرت علی ؓکے لختِ جگرحضرت فاطمہؓ کے نورِنظرسیدالشہداء سیدناحضرت امام حسینؓ کی ولادت ہوئی
اسی مبار مہینہ میں مسجدضرار کونذرِآتش کیاگیا۔
اسی مبارک مہینہ میں جھوٹامدعی نبوت مسیلمہ کذاب واصلِ جہنم ہوا۔
اسی مبارک مہینہ میں حضورِاکرم ﷺ نے ام المؤمنین حضرت صفیہ ؓ سے نکاح فرمایا
اسی مبارک مہینہ میں تحویلِ کعبہ کاحکم نازل ہوا۔
اسی مبارک مہینہ میں قرآنِ مجید کے نزول کافیصلہ ہوا
اس مبارک مہینہ کی 15.16درمیانی شب شبِ برات کہلاتی ہے جس میں اﷲ تعالیٰ آسمان دنیاپہ نزول فرماتے ہیں
شعبان المعظم کوفضیلت واہمیت اسی شب کی وجہ سے حاصل ہے برء ات کے معنیٰ چھٹکارانجات حاصل کرنے کے ہیں اگریوں بھی کہاجائے توبہتر ہوگاکہ یہ شب شبِ نجات ہے جس میں ہم جیسے گناہگاروں کوبھی بری کیاجاتاہے اوربخشش وعام معافی کااعلان بھی کیاجاتاہے اسی وجہ سے علماء نے اسے اورکئی نام بھی دیے ہیں مثلاً۔لیلۃ الکفر(گناہوں سے رہائی پانے والی رات)لیلۃ المغفرت(بخشش والی رات)لیلۃ الشفاعت(شفاعت والی رات)

رات کاقیام اورآقاخیرالانامﷺ
حضرت عائشہ صدیقہ ؓ فرماتی ہیں کہ ایک رات آقاء نامدارﷺ میرے حجرے میں آرام فرماتھے رات کے کسی حصے میں میری آنکھ کھلی تومیں نے حضوراکرم ﷺ کواپنے حجرے میں موجود نہ پایا۔میں آپ ﷺ کی تلاش میں نکلی تمام ازواج مطہرات کے حجروں میں تلاش کیایہانتک کہ نبی کریم ﷺ کی تلاش میں جنت البقیع میں پہنچ گئی ،میں نے دیکھاکہ سرکاردوعالم ﷺ اپنے پروردگار سے اپنی امت کی بخشش کی دعا مانگ رہے ہیں ۔حضوراکرم ﷺ نے پوچھاکہ عائشہ !تجھے معلوم ہے کہ آج کونسی رات ہے؟

آپ ؓ نے فرمایاکہ اﷲ اور اس کے رسولؐ بہتر جانتے ہیں ۔

آقاء نامدارﷺ نے فرمایاآج شب برات ہے یہ اتنی رحمتوں اوربرکتوں والی رات ہے جس میں مولاء کریم اپنی شانِ کریمی کے صدقے بنوکلب قبیلے کی بھیڑوں اوربکریوں کے بالوں کے برابر گناہگاروں کوبخش دیتے ہیں ۔قبیلہ کلب کے پاس جوبھیڑیں بکریاں تھیں وہ اس وقت سارے عرب قبائل کی بھیڑوں بکریوں کی تعداد سے کہیں زیادہ تھیں ۔

رب کی رحمت سے دخول جنت
حضرت عائشہ ؓ سے روایت ہے کہ آنحضرت ﷺ نے فرمایا:توجانتی ہے کہ یہ رات کیسی ہے ؟یعنی نصف شعبان کی رات؟میں نے کہایارسول اﷲ (ﷺ)اس میں کیاہوتاہے؟فرمایااولادآدم میں سے اس سال میں جوبچہ پیداہونے والاہو،اس کانام لکھ دیاجاتاہے اورسال بھر میں جتنے انسان مرنے والے ہوتے ہیں ،ان کانام لکھ دیاجاتاہے اوراس میں بندوں کے اعمال اُٹھائے جاتے ہیں اوراس رات میں بندوں کے رزق نازل کیے جاتے ہیں میں نے کہایارسول اﷲ !کیاکوئی شخص جنت میں اﷲ تعالیٰ کی رحمت کے بغیرداخل نہیں ہوگا؟ارشاد فرمایاکہ نہیں !کوئی شخص بھی جنت میں اﷲ تعالیٰ کی رحمت کے بغیرداخل نہیں ہوگا،تین مرتبہ فرمایا،میں نے کہایارسول اﷲ !آپ بھی نہیں ؟

آنحضرت ﷺ نے اپنامبارک ہاتھ اپنے سر پہ رکھااورفرمایا:ـ’’میں بھی جنت میں داخل نہیں ہونگامگر یہ کہ اﷲ تعالیٰ اپنی رحمت کے ساتھ مجھ کوڈھانپ لیں ۔‘‘یہ بات آپ نے تین مرتبہ ارشاد فرمائی(مشکٰوۃشریف)

رحمت کے خزانے ،بخشش کے بہانے
حضرت علی ؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے ارشاد فرمایاکہ جب شعبان کی پندرہویں رات ہوتواس رات کوقیام کرو۔اوردن کوروزہ رکھو۔کیونکہ اس دن اﷲ تعالیٰ کی رحمت آفتاب کے غروب ہوتے ہی آسمانِ دنیاپرظاہر ہوتی ہے اوراس کی رحمت سارے عالم میں پھیل جاتی ہے حضورِاکرم ﷺ فرماتے ہیں کہ اﷲ تعالیٰ اس رات اپنے بندوں کوپکارتے ہیں
ہے کوئی بخشش ،مغفرت طلب کرنے والا؟کہ میں اسے بخش دوں
ہے کوئی مصیبت زدہ؟کہ میں اسے مشکلات سے آزاد کردوں
ہے کوئی اپنی کسی خواہش،حاجت والا؟کہ میں اس کی حاجت اورمرادکوپوری کردوں
حضوراکرم ﷺ اس شب کوقیام بھی فرمایاکرتے تھے اوراگلے دن روزے کابھی اہتمام کیاکرتے تھے
حضرت ابوموسیٰ اشعری ؓ سے مروی ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے ارشاد فرمایا: کہ بیشک اﷲ تعالیٰ جھانکتے ہیں نصف شعبان کی رات میں ،پس مغفرت فرمادیتے ہیں اپنی تمام مخلوق کی ،مگر مشرک کی،یاکینہ رکھنے والے کی بخشش نہیں فرماتے (مشکوٰۃ شریف)
ایک روایت میں ہے کہ حضوراکرم ﷺ نے شعبان کی 13تاریخ کواپنی امت کی شفاعت کی دعا فرمائی تواس دعاکو شرف قبولیت اس طرح نصیب ہواکہ اس دعاکوتہائی ملی ،پھر 14شعبان کودعاکی تودوتہائی عطاہوا15شعبان کورحمت کائناتﷺنے دعافرمائی توامت کی بخشش اورمغفرت کے لیے وہ سب کچھ عطاہواجوآپ ﷺ نے اپنے خالق ومالک سے مانگاتھا۔

شعبان المعظم برکتوں والا
ام المؤمنین حضرت ام سلمہ ؓ فرماتی ہیں کہ میں نے رسول اﷲ ﷺ کودومہینے متواتر روزے رکھتے ہوئے نہیں دیکھامگر رمضان اورشعبان میں۔
حضرت عائشہ ؓ فرماتی ہیں کہ اس ماہ میں آپ ﷺ بکثرت روزے رکھاکرتے تھے صحابہ کرام ؓ سے بھی یہی منقول ہے کہ ان دومہینوں یعنی رمضان اورشعبان میں آپﷺ نہایت اہتمام کے ساتھ روزے رکھاکرتے تھے
حضرت اسامہ بن زیدؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے رسول اکرم، ﷺ سے عرض کیاکہ آپؐشعبان میں کثرت سے روزے کیوں رکھاکرتے تھے؟نبی کریم ﷺ نے فرمایا:اسامہ !یہ بہت ہی مبارک مہینہ ہے رجب المرجب اوررمضان المبارک کے درمیان واقع ہے جس سے لوگ غافل ہیں اس مہینے میں انسانوں کے اعمال کورب العزت کے حضور پیش کیاجاتاہے لہٰذامیں نے اس ماہ کوزیادہ محبوب رکھاہے میر ے اعمال بھی میرے پروردگار کے سامنے پیش ہوئے تواس حال میں مجھے روزہ سے ہوناچاہیے۔ہمیں بھی چاہیے کہ ہم بھی اس مبارک مہینہ اورمبارک رات میں اپنے رب کومنالیں اﷲ تعالیٰ ہم سب کواس مبارک ماہ اورمبارک رات میں اپنی رحمتوں اورمہربانیوں سے خب لطف اندوز ہانے کی توفیق عطا فرمائے (آمین یارب العالمین)

Read more

http://www.itustad.com/threads/29084/

Aiek Khaber

Aiek Khaber

Aiek Khabar<br><a>View Raw Image</a>
تعزیزات کیلئے ان زرائع سے دعا و تعزیرات کا اشتراک کر سکتے ہیں۔
Email
wazirabad7@msn.com
latestpoetry’googlemail.com
****
Facebook
****
Gmail
Ub bi barsat : poetry by Parveen shakir

Ub bi barsat : poetry by Parveen shakir

[ATTACH]
LNKD.IN/GAJBYYJ